وہ مقامی واگھری بولی میں کہتی ہیں، ’’ہون جانو، ہون خبر؟ [میں کیا جانوں کہ ایسا کیوں ہے؟]‘‘

راجستھان کے بانسواڑہ ضلع کے بوری، کھرویڑا اور سیملیا گاؤوں میں جب میں عورتوں کے ساتھ بات چیت کر رہی تھی، تو میں نے غور کیا کہ ان میں سے زیادہ تر عورتیں زمین پر چٹائی بچھا کر یا بغیر چٹائی کے ہی فرش پر بیٹھی ہوئی ہیں۔ مرد یا فیملی کے بڑے بزرگ ہمیشہ کسی اونچی جگہ پر – کسی کرسی یا چارپائی پر بیٹھتے ہیں۔ مردوں کی موجودگی میں بزرگ عورتیں بھی زمین پر ہی بیٹھتی ہیں۔ اگر وہ بیمار ہیں، تو بھی اس سے فرق نہیں پڑتا ہے۔ بچوں کے معاملے میں بھی یہی روایت چلی آ رہی ہے – لڑکے کسی اونچی جگہ پر بیٹھ سکتے ہیں، لیکن لڑکیوں کو اس کی اجازت نہیں ہے۔

کھرویڑا اور سیملیا کے زیادہ تر لوگ کھیتی باڑی کرتے ہیں۔ روایتی طور پر وہ بُنکر تھے، لیکن گزشتہ کچھ نسلوں سے انہوں نے کپڑے بُننے کا کام چھوڑ دیا ہے۔ بوری میں کچھ عورتیں ڈیئری کسان بھی ہیں، یعنی مویشیوں کو پال کر ان کے دودھ وغیرہ بیچتی ہیں۔

جب ان سے اس بابت پوچھا گیا، تو ان سبھی نے ایک زبان میں کہا کہ عورتوں کے زمین پر بیٹھنے کی روایت ہے۔ شادی ہوجانے کے بعد، بیٹیاں اپنے میکے جانے پر اونچی جگہوں پر بیٹھ سکتی ہے، لیکن گھر کی بہوئیں ہمیشہ نیچے فرش پر ہی بیٹھیں گی۔

عورتیں صرف اسی وقت نیچے فرش پر نہیں بیٹھتیں جب مرد اور گاؤں کے بزرگ ایک جگہ پر ہوں، بلکہ انھیں اس وقت بھی فرش پر ہی بیٹھنا پڑتا ہے جب میرے جیسے مہمان آس پاس ہوں۔ یعنی، جسے بھی وہ خود سے زیادہ سماجی حیثیت یا خصوصی اختیار رکھنے والا سمجھتی ہیں اس کے سامنے فرش پر ہی بیٹھتی ہیں۔

ہم دھیرے دھیرے اس موضوع پر سیلف ہیلپ گروپ کے ساتھ بات چیت کرنے لگتے ہیں۔ وہ اس بات کو لے کر محتاط تھیں کہ وہ اپنے بزرگوں یا ساس سسر کی تذلیل تو نہیں کر رہی ہیں۔ بعض کا خیال تھا کہ یہ روایت ختم ہونی چاہیے، بعض چاہتی تھیں کہ یہ باقی رہے۔

آخرکار، تھوڑی دیر تک سمجھانے کے بعد سبھی عورتیں کرسی، چارپائی یا ایک چبوترے پر بیٹھ کر تصویر کھنچوانے کے لیے تیار ہو گئیں۔ حالانکہ، انہوں نے بار بار اس بات کی ضد کی کہ وہ گھر کے اندر یا پیچھے کے احاطے میں یا اپنے بیٹے کو گود میں لے کر فوٹو کھنچوائیں گی۔

کچھ عورتوں کے لیے یہ عام بات تھی، اور کچھ عورتوں کے لیے کچھ دیر کی اس علامتی ترقی کے لیے خود کو تیار کرنا آسان نہیں تھا۔

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیں: بھوری بُنکر، کھرویڑا گاؤں؛ دائیں: رتن پاٹی دار، بوری گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیں: رمیلا پاٹی دار، بوری گاؤں؛ دائیں: لکشمی بُنکر، کھرویڑا گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیں: کچری یادو، سیملیا گاؤں؛ دائیں: وملا پاٹی دار، بوری گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیں: ببلی دیوی، کھرویڑا گاؤں؛ دائیں: سنگیتا بُنکر، کھرویڑا گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیں: لکشمی بُنکر، کھرویڑا گاؤں؛ دائیں: لکشمی بُنکر، سیملیا گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیں: انیتا یادو، سیملیا گاؤں؛ دائیں: منی بُنکر، کھرویڑا گاؤں

مترجم: محمد قمر تبریز

Nilanjana Nandy

Nilanjana Nandy is a Delhi-based visual artist and educator. She has participated in several art exhibitions, and has recieved a scholarship from the Pont-Aven School of Art, France, among others. She has a master’s degree in Painting from the Faculty of Fine Arts, Maharaja Sayajirao University of Baroda. The photographs featured here were taken during an artist in residency programme in Rajasthan called ‘Equilibrium’.

Other stories by Nilanjana Nandy
Text Editor : Sharmila Joshi

Sharmila Joshi is former Executive Editor, People's Archive of Rural India, and a writer and occasional teacher.

Other stories by Sharmila Joshi
Translator : Mohd. Qamar Tabrez

Mohd. Qamar Tabrez is the Translations Editor, Urdu, at the People’s Archive of Rural India. He is a Delhi-based journalist.

Other stories by Mohd. Qamar Tabrez