ریڈیو پر کرناٹک موسیقی کی آوازیں مایلاپور کی ایک چھوٹی سی گلی میں نیلے رنگ کے ایک تنگ کمرے میں گونج رہی ہیں۔ ہندو دیوی- دیوتاؤں کی تصویریں دیواروں پر آویزاں ہیں، اور کٹہل کی لکڑی اور چمڑے کے ٹکڑے فرش پر بکھرے پڑے ہیں۔ ہتھوڑوں، کیلوں، ٹیوننگ کے لیے لکڑی کی کھونٹی اور پالش کرنے کے لیے ارنڈی کے تیل کے درمیان بیٹھے جیسوداس اینتھنی اور ان کے بیٹے ایڈوِن جیسوداس اس کمرے میں کام کر رہے ہیں۔ وسط چنئی کے اس پرانے رہائشی علاقے میں، کمرے کے باہر مندر کی گھنٹیاں بج رہی ہیں۔

یہ دونوں استاد کاریگر مردنگ بناتے ہیں، یہ ایک ڈھول ہے جو کرناٹک (جنوبی ہندوستانی کلاسیکی) موسیقی میں سنگت کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔ ’’میرے پردادا نے تنجاوور میں مردنگ بنانا شروع کیا تھا،‘‘ چنئی سے ۳۵۰ کلومیٹر دور، پرانے شہر کا ذکر کرتے ہوئے ایڈوِن کہتے ہیں۔ ان کے والد اوپر دیکھتے ہیں اور مسکرانے لگتے ہیں، پھر دو دائرہ کار چمڑے کے ٹکڑے کے کناروں کے چاروں طرف سوراخ کرنا جاری رکھتے ہیں۔ اس کے بعد وہ دونوں ٹکڑوں کو پھیلاتے ہیں اور انھیں چمڑے کی پتلی پٹیوں سے ایک کھوکھلے فریم کے کھلے کنارے پر باندھ دیتے ہیں۔ آلہ موسیقی کی ’باڈی‘ یا ریزونیٹر کے باہر ایک سرے سے دوسرے سرے تک موٹے چمڑے کی پٹیاں کھینچی اور موڑی بھی جاتی ہیں۔ مردنگ بنانے کا پورا عمل (وہ ایک ہی وقت میں ایک سے زیادہ پر کام کرتے ہیں) میں تقریباً سات دن لگتے ہیں۔

PHOTO • Ashna Butani
PHOTO • Ashna Butani

بائیں: جیسوداس اینتھنی دائرہ کار چمڑے کے ٹکڑے میں سوراخ کر رہے ہیں جسے وہ بید کی پتلی پٹّی کا استعمال کرتے ہوئے مردنگ کے ایک کنارے پر کستے ہیں۔ دائیں: آلہ موسیقی کی پِچ کو متوازن کرنے کے لیے لکڑی کی چھڑی اور پتھر کا استعمال کیا جاتا ہے

یہ فیملی تقریباً ۵۲۰ کلومیٹر دور، کاموتھی شہر کے بڑھئی سے فریم خریدتی ہے؛ یہ کٹہل کی سوکھی لکڑی سے بنایا گیا ہے، جس کی ریشہ داری اور چھوٹے سوراخ یہ یقینی بناتے ہیں کہ آلہ کی پِچ موسم کی تبدیلی سے بھی نہ بدلے۔ گائے کا چمڑا ویلور ضلع کے انبور شہر سے خریدا گیا ہے۔

ہم جب ایڈوِن سے ملے، تو وہ تنجاوور ضلع میں کاویری ندی کے کنارے سے لائے گئے پتھر کو کوٹ رہے تھے۔ کوٹا گیا پتھر، پسے ہوئے چاول اور پانی کے ساتھ ملا کر کَپّی مردنگ کے دونوں سروں پر چمڑے پر لگایا جاتا ہے۔ یہ طبلہ جیسی آواز پیدا کرتا ہے اور ایڈوِن کی فیملی چنئی کی کرناٹک سنگیت منڈلیوں میں کَپّی کے فن میں مہارت کے لیے مشہور ہے۔ (کُچی مردنگ میں زیادہ لمبی آواز پیدا کرنے کے لیے اس کے دائیں سرے کے پاس بانس کی چھوٹی چھوٹی پٹّیوں کے ساتھ لکڑی کا ایک موٹا فریم ہوتا ہے۔)

PHOTO • Ashna Butani
PHOTO • Ashna Butani
PHOTO • Ashna Butani

بائیں: جیسوداس جب چھوٹے تھے، تو ان کے بارے میں اخبار میں شائع ایک مضمون، جس میں ان کے کام اور وراثت کا ذکر ہے۔ درمیان میں: دیوار پر چپکائے گئے تمل میں شائع ایک دوسرے مضمون میں اس فیملی کے ہنر کے بارے میں بتایا گیا ہے۔ دائیں: انھوں نے اپنی کاریگری کے لیے انعامات جیتے ہیں

آلہ کا دایاں سرا، کرنئی، مختلف قسم کے چمڑے کی تین پرتوں سے بنا ہوتا ہے – باہری دائرہ، اندرونی دائرہ اور ایک حصہ جس کے بیچ میں کالا دائرہ ہوتا ہے۔ بایاں سرا، جسے تھوپّی کہا جاتا ہے، ہمیشہ دائیں سرے سے آدھا اِنچ بڑا ہوتا ہے۔

چونسٹھ سالہ جیسوداس اور ۳۱ سالہ ایڈوِن، دسمبر- جنوری میں سالانہ مارگاژی میوزک فیسٹول کے دوران ہر ہفتے ۳ سے ۷ مردنگ بناتے ہیں، اور سال کے باقی دنوں میں دیگر آلات کی مرمت کے علاوہ، تقریباً ۳ سے ۴ ہر ہفتے بناتے ہیں۔ ہر ایک مردنگ سے وہ ۷۰۰۰ روپے سے ۱۰ ہزار روپے کے درمیان کماتے ہیں۔ دونوں ہفتے میں سات دن کام کرتے ہیں – جیسوداس صبح ۹ بجے سے رات ۸ بجے تک اور ایڈوِن کام سے لوٹنے کے بعد شام کو (وہ چاہتے ہیں کہ ہم ان کی نوکری کی کسی بھی تفصیل کا ذکر نہ کریں)۔ فیملی کا ورکشاپ ان کے گھر سے ۱۵ منٹ کی پیدل دوری پر ہے۔

PHOTO • Ashna Butani
PHOTO • Ashna Butani

بائیں: ایڈون کے پاس دن کی نوکری ہے، لیکن شام کو اور اتوار کو، وہ اپنے والد کے ساتھ ان کے ورکشاپ میں کام کرتے ہیں۔ دائیں: ایڈون کی بیوی، ۲۹ سالہ نینسی، ایک خاتونِ خانہ ہیں جو اچھی طرح جانتی ہیں کہ مردنگ کیسے بنایا جاتا ہے، لیکن فیملی میں یہ کام مردوں کے لیے ریزرو ہے

’’ہم اس وراثت کو جاری رکھے ہوئے ہیں، حالانکہ ہم دلت عیسائی ہیں،‘‘ ایڈون کہتے ہیں۔ ان کے دادا، اینٹونی سیباسٹین، جو کہ ایک مشہور مردنگ کاریگر تھے، کو کرناٹک موسیقاروں کے ذریعے ان کے کام کے لیے پذیرائی کی گئی، لیکن ایک آدمی کے طور پر انھیں عزت نہیں دی گئی، ایڈون یاد کرتے ہیں۔ ’’میرے دادا مردنگ بناتے اور بیچتے تھے، لیکن جب وہ آلہ موسیقی پہنچانے کے لیے صارفین کے گھر جاتے، تو وہ انھیں چھونے سے منع کر دیتے اور پیسے فرش پر رکھ دیتے تھے۔‘‘ ایڈون کو لگتا ہے کہ ذات کا مسئلہ ’’اتنا برا نہیں ہے جتنا یہ ۵۰ سال پہلے ہوا کرتا تھا،‘‘ لیکن زیادہ تفصیل میں جائے بغیر کہتے ہیں کہ یہ تفریق آج بھی جاری ہے۔

جب وہ اپنے والد کے ساتھ مل کر بنائے گئے ایک مردنگ کو بجاتے ہیں، تو آواز کے بارے میں ان کی گہری سمجھ واضح طور پر نظر آتی ہے۔ لیکن، ایڈون کہتے ہیں کہ انھیں اپنی ذات اور مذہب کی وجہ سے آلہ موسیقی کو بجانے کی ٹریننگ سے محروم رکھا گیا۔ ’’استاد مجھ سے کہا کرتے تھے کہ میرے اندر موسیقی کی سمجھ ہے۔ انھوں نے کہا کہ میرے ہاتھ بجانے لائق ہیں۔ لیکن جب میں نے انھیں سکھانے کے لیے کہا، تو انھوں نے منع کر دیا۔ کچھ سماجی رکاوٹیں ابھی بھی موجود ہیں...‘‘

PHOTO • Ashna Butani
PHOTO • Ashna Butani

بائیں: کرناٹک موسیقی کافی حد تک ہندو اونچی ذات کے لیے محفوظ ہے اور جیسوداس اور ایڈون حالانکہ دلت عیسائی ہیں، لیکن ان کے ورکشاپ کی دیواروں پر ہندو دیوی- دیوتاؤں کی تصویریں آویزاں ہیں۔ دائیں: ان کے گھر کا داخلہ دروازہ ان کی اپنی برادری کی تصویروں سے مزین ہے

ایڈون کی فیملی عزت دار کرناٹک موسیقاروں کی عام طور سے ہندو اونچی ذات کے صارفین کے ساتھ کام کرتی ہے اور یہ ان کے ورکشاپ کی دیواروں پر عیاں ہے، جو ہندو دیوی- دیوتاؤں کی تصویروں سے سجے ہیں، حالانکہ مردنگ کاریگر لُز چرچ آف اَور لیڈی آف لائٹ، مایلاپور کے رکن ہیں۔ ’’مجھے معلوم ہے کہ میرے دادا اور ان کے والد عیسائی تھے۔ ان سے پہلے، فیملی ہندو تھی،‘‘ ایڈون کہتے ہیں۔

استادوں کے ذریعے مردنگ بجانے کی ٹریننگ دینے سے انکار کرنے کے باوجود، انھیں امید ہے کہ مستقبل الگ ہوگا۔ ’’ہوسکتا ہے کہ میں آلہ نہ بجا پاؤں،‘‘ وہ کہتے ہیں۔ ’’لیکن جب میرے بچے ہوں گے، تو میں یقینی بناؤں گا کہ وہ ایسا کریں۔‘‘

(مترجم: ڈاکٹر محمد قمر تبریز)

محمد قمر تبریز 2015 سے ’پاری‘ کے اردو/ہندی ترجمہ نگار ہیں۔ وہ دہلی میں مقیم ایک صحافی، دو کتابوں کے مصنف، اردو ’روزنامہ میرا وطن‘ کے نیوز ایڈیٹر ہیں، اور ماضی میں ’راشٹریہ سہارا‘، ’چوتھی دنیا‘ اور ’اودھ نامہ‘ جیسے اخبارات سے منسلک رہے ہیں۔ ان کے پاس علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے تاریخ اور جواہر لعل نہرو یونیورسٹی، دہلی سے پی ایچ ڈی کی ڈگری ہے۔ You can contact the translator here:

Ashna Butani

آشنا بوٹانی ایشین کالج آف جرنلزم، چنئی سے حالیہ گریجویٹ ہیں۔ وہ کولکاتا میں مقیم ہیں اور صنف، ثقافت، ذات اور ماحولیات پر مضامین لکھنے میں دلچسپی رکھتی ہیں۔

Other stories by Ashna Butani