اس فلم کو ۶۳ویں نیشنل فلم ایوارڈس ۲۰۱۶ میں بہترین پروموشنل فلم کے لیے سلور لوٹس ( رجت کمل ) ایوارڈ دیا گیا ہے۔

مہیشور، مدھیہ پردیش میں ندی کے کنارے واقع ایک خوبصورت قصبہ ہے، جس کا تاریخ میں نمایاں مقام ہے۔ اٹھارویں صدی میں، اہلیا بائی ہولکر، جنہوں نے اندور کی شاہی ریاست پر حکومت کی، نے یہاں پر ہاتھ سے بُنائی کو فروغ دیا۔ آج دو صدیوں کے بعد بھی، یہ قصبہ مہیشوری ساڑیوں کے لیے مشہور ہے۔ سال ۲۰۱۲ اور ۲۰۱۵ کے درمیان، یہاں پر ہتھ کرگھا صنعت میں بڑھتے ہوئے مواقع کو دیکھتے ہوئے ۲۰۰ سے زیادہ بُنکر دوسری جگہوں سے ہجرت کرکے مہیشور آ چکے ہیں۔ بہت سے لوگ اترپردیش کے بارہ بنکی سے یہاں آئے ہیں۔ یہ اُس صنعت کے لیے انہونی اور عجیب سی بات ہے، جو کہ خود ہی زوال کی شکار ہے۔ یہ بھی عجیب سی بات ہے کہ اس دست کاری کو دوبارہ زندہ کرنے میں سب سے بڑا رول نوجوان بُنکر ادا کر رہے ہیں۔ وہ اس تاریخی شہر کی بُنکر برادری کے لیے حوصلے کا باعث ہیں۔

اس فلم میں، نوجوان بُنکر اپنی اپنی کہانی سنا رہے ہیں۔


Mohd. Qamar Tabrez is PARI’s Urdu/Hindi translator since 2015. He is a Delhi-based journalist, the author of two books, and was associated with newspapers like ‘Roznama Mera Watan’, ‘Rashtriya Sahara’, ‘Chauthi Duniya’ and ‘Avadhnama’. He has a degree in History from Aligarh Muslim University and a PhD from Jawaharlal Nehru University, Delhi. You can contact the translator here:

Nidhi Kamath & Keya Vaswani

Nidhi Kamath and Keya Vaswani are graduates of the Indian Institute of Crafts and Design, Jaipur. They are both co-founders and managing partners of Storyloom Films. This film is a part of their joint PARI Fellowship 2015

Other stories by Nidhi Kamath & Keya Vaswani