html تخمینوں کا سیلاب، انسانیت کا قحط

حکومتِ ہند کی وزارتِ زراعت کے دسمبر ۲۰۱۶ کی خشک سالی کے نظم کا مینول میں خشک سالی کی کیسے تعریف، تخمینہ اور زبردست تبدیلی کا اعلان کیا گیا ہے۔ اس تبدیلی میں فصل (کے نقصان) کا تخمینہ اور قحط سالی کے تعین کو الگ کر دیا گیا ہے۔ اور اب – مرکز کے ذریعے تھوپی گئی شرطوں کو چھوڑ کر – خشک سالی کا اعلان کرنے کے اختیار کو حقیقتاً چھین لیا گیا ہے۔

مثال کے طور پر، اس سال ۳۱ اکتوبر کو، مہاراشٹر نے اپنے ۳۵۸ تعلقوں میں سے ۱۵۱ کو خشک سالی سے متاثر قرار دیا تھا، لیکن حقیقت میں ۲۰۰ سے زیادہ تعلقے متاثر ہیں۔ روایتی طور سے معاوضہ کے لیے ضروری اسباب (مثال کے طور پر، کیا کسانوں کو فصل کے نقصان کے بعد دوسری یا تیسری بوائی کے لیے مجبور کیا گیا تھا) کو اب بے محل بنا دیا گیا ہے۔ سیٹلائٹ ڈیٹا – جو دوسری بوائی کا پتہ نہیں لگا سکتا ہے – پر زور اس کو یقینی بناتا ہے۔

تبدیلیاں کئی ہیں اور انتہائی سنگین ہیں – اور ان میں سے زیادہ تر کسانوں کو حقیقتاً تکلیف پہنچاتی ہیں۔

(مترجم: ڈاکٹر محمد قمر تبریز)

Mohd. Qamar Tabrez is PARI’s Urdu/Hindi translator since 2015. He is a Delhi-based journalist, the author of two books, and was associated with newspapers like ‘Roznama Mera Watan’, ‘Rashtriya Sahara’, ‘Chauthi Duniya’ and ‘Avadhnama’. He has a degree in History from Aligarh Muslim University and a PhD from Jawaharlal Nehru University, Delhi. You can contact the translator here:

P. Sainath
psainath@gmail.com

P. Sainath is Founder Editor of the People's Archive of Rural India. He has been a rural reporter for decades and is the author of 'Everybody Loves a Good Drought'.

Other stories by P. Sainath