اروناچل پردیش کی زیرو وادی میں کل ۲۶ بڑے قبیلے ہیں۔ انہی میں سے ایک اَپٹانی قبیلہ بھی ہے، جو اپنی الگ امتیازی خصوصیت رکھتا ہے۔ آرکی ٹیکچر یعنی تعمیرات، زراعت، جسم کی زیبائش، کھانے اور زبانی تاریخ جیسی تمام روایات کی بالکل الگ پہچان ہے۔

ایٹا نگر سے تقریباً ۱۵۰ کلومیٹر دور، ۱۵۰۰ میٹر سے زیادہ کی بلندی پر واقع زیرو ٹاؤن، لوور سوبانسیری ضلع کا ہیڈکواٹر ہے۔ ایک مقامی غیر سرکاری تنظیم، نگونو زیرو کے ایک اہل کار کے اندازہ کے مطابق، اس علاقے میں تقریباً ۲۶ ہزار اَپٹانی رہتے ہیں۔

جنوری میں، میں نے زیرو کی ہانگ بستی (گاؤں) میں ایک اَپٹانی فیملی کے ساتھ  چند روز گزارے۔


02-DSC_4030-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

لکڑی کے طوالہ پر بانس سے بنا ہوا ہانگ کا ایک گھر


03-DSC_3884-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

ہِبیو ایرا، جن کی عمر تقریباً ۹۰ سال ہے، ہانگ گاؤں میں اپٹانی قبیلہ کے روایتی ٹیٹو کے نشان اپنی ناک، پیشانی اور تھوڑی پر بنائے ہوئے۔ اپٹانی قبیلہ کی عورتیں ناک میں ایک زیور پہنتی ہیں، جن کو یاپِنگ ہرلو کہتے ہیں، جو کہ بلوغیت میں قدم رکھنے کی نشانی سمجھا جاتا ہے۔ اپٹانی کمیونٹی کے ایک کارکن، نارنگ یمانگ بتاتے ہیں کہ ناک میں اسے پہننے اور چہرے پر گہرے رنگ کا ٹیٹو بنانے کی روایت دراصل ایک مزاحمت کے طور پر شروع ہوئی، کیوں کہ دشمن قبیلوں کے لوگ جب حملہ کرتے تھے، تو وہ عورتوں کو اغوا کر لیا کرتے تھے، اور یہ عورتیں دوبارہ پھر کبھی نظر نہیں آتی تھیں۔ نارنگ کے مطابق، ناک کی بالیاں اور ٹیٹو کا مقصد تھا ’’(حملہ آواروں کے لیے) ہمیں کم دلکش کے طور پر دکھانا۔‘‘ جسم پر اس قسم کے نشانات بنانے کی روایت ۱۹۷۰ سے ہی ختم ہو چکی ہے۔


04-DSC_3897-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

۹۰ سالہ ہِبیو ٹاگ، شاید اس کمیونٹی کی سب سے بزرگ خاتون (اپٹانی میں ’آنے‘)، ہانگ میں بانس سے بنی اس جھونپڑی میں رہتی ہیں۔ یہاں پر بنے ہوئے تمام گھر ایک جیسے ہیں، روایتی ڈھانچے عمودی طوالہ پر بنے ہوئے ہیں۔


05-DSC_3910-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

ہِبیو ٹاگ پوری تواضع سے فوٹو کھنچوانے کے لیے کھڑی ہو جاتی ہیں، اور حالانکہ وہ ہندی یا انگریزی میں بات نہیں کرتیں، لیکن مجھ سے بات کرنے کی کوشش کرتی ہیں۔ ’’مارچ میں ہمارے میوکو تہوار میں آنا،‘‘ وہ کہتی ہیں، ’’ہم تمہاری تواضع اپنے روایتی کھانے سے کریں گے۔‘‘


06-DSC_3845-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

ٹالو ٹانی ایک روایتی تلوار دکھاتے ہیں، جسے اپٹانی کمیونٹی کا ہر مرد ساتھ لے کر چلتا ہے۔ ہر فیملی میں ایسی ۸ سے ۱۰ تلواریں ہوتی ہیں، جسے اپنے دامادوں کو جہیز کے طور پر دیا جاتا ہے


07-DSC_3860-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

ٹالو، جو ایک اپٹانی شکاری ہیں، بندوق کے ساتھ۔ شکار کرنا ایک ثقافتی عمل ہے، اپٹانی شکاری مختلف قسم کے جانوروں کا شکار کرتے ہیں، جس میں لکڑ بگھے، جنگلی سور اور پرندے شامل ہیں۔ وہ یہ کام زندہ رہنے، تجارتی مقاصد اور دواؤں کے لیے کرتے ہیں، جیسا کہ ۲۰۱۳ کی ایک تحقیق میں کہا گیا ہے۔ لیکن شکار کی وجہ سے اب چرند و پرند کی کئی قسمیں خاتمہ کے دہانے پر پہنچ چکی ہیں۔


08-DSC_3809-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

نو سال کی ایک اپٹانی لڑکی، ٹیک لیمو (نیلے جیکٹ میں)، ہانگ گاؤں میں ایک ٹوٹے ہوئے آٹو میں کھیل رہی ہے


09-DSC_3943-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

ہِبیو آیوم، جون سے ستمبر تک روایتی طریقے سے چاول کی کھیتی کرتی ہیں۔ اپٹانی کے ماہی پروری کے انوکھے طریقے اور قابل استقامت زرعی تکنیک کی وجہ سے، زیرو کو اپریل ۲۰۱۴ میں یونیسکو ورلڈ ہیریٹیج سائٹ نامزد کیا گیا۔


10-DSC_4110-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

روایتی کھیتی کی شروعات ہر سال جون میں ہوتی ہے


11-DSC_4028-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

نارنگ تام اور یمانگ کے گھر ۔ میں یہاں پر دو رات رکی، اور انھوں نے مجھے روایتی اپٹانی کھانے دیے۔ ان کے کھانوں میں چاول سب سے اہم جزو ہے، جس کے ساتھ عام طور پر گوشت (پورک، چکن، چوہا) اور دیگر اشیاء ہوتی ہیں۔


12-DSC_4005-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

اپٹانی عام طور پر اپنے مہمانوں کا استقبال گھر پر چاول سے بنی ہوئی روایتی بیئر سے کرتے ہیں جس کے ساتھ اسپیشل نمک بھی ہوتا ہے، جسے ٹَپیو کہتے ہیں، جسے گھر پر دیسی پودوں کی راکھ سے بنایا جاتا ہے


13-DSC_405-TB-The Apatani at Ground Ziro7.jpg

اپٹانی عام طور سے چوہے کھاتے ہیں، اور یہ مقامی بازار میں ۲۵۰ روپے فی کلو کے حساب سے ملتا ہے


14-DSC_4046-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

نارنگ یمانگ، کمیونٹی ورکر (اپٹانی زبان میں ’گمبوری‘) اپنے گلے میں روایتی موتی کے ہار پہنتی ہیں


15-DSC_4105-TB-The Apatani at Ground Ziro.jpg

ہانگ کے دھان کے کھیتوں کے ارد گرد موجود جنگلاتی علاقے

Mohd. Qamar Tabrez is PARI’s Urdu/Hindi translator since 2015. He is a Delhi-based journalist, the author of two books, and was associated with newspapers like ‘Roznama Mera Watan’, ‘Rashtriya Sahara’, ‘Chauthi Duniya’ and ‘Avadhnama’. He has a degree in History from Aligarh Muslim University and a PhD from Jawaharlal Nehru University, Delhi. You can contact the translator here:

Tanmoy Bhaduri

Tanmoy Bhaduri is Kolkata-based independent photojournalist who focuses on social, cultural and environmental issues.

Other stories by Tanmoy Bhaduri