تو اب، مہاراشٹر میں بیل گاڑیوں کی دوڑ کو قانونی طور پر منظوری مل گئی ہے۔ اپریل ۲۰۱۷ میں، ریاستی اسمبلی نے جانوروں پر ہونے والے ظلم کی روک تھام کا (مہاراشٹر ترمیمی) بل پاس کیا تھا، جس سے اس قسم کی دوڑ کو قانونی حیثیت دی جاتی ہے۔ یہ تمل ناڈو میں پاس کیے گئے اسی قانون جیسا ہے، جس کے تحت جلی کٹّو کو قانونی منظوری دی گئی ہے۔

اب، ریاستی حکومت کے ذرائع نے میڈیا کو بتایا ہے کہ صدرِ جمہوریہ نے مہاراشٹر اسمبلی کے ذریعے پاس کیے گئے اس بل کو اپنی منظوری دے دی ہے۔

اس نے ایک دہائی قبل کی وہ یادیں تازہ کر دیں، جب میں نے چندر پور ضلع کے دیلان واڈی گاؤں میں دوڑ کا نظارہ کرتے ہوئے ایک دن گزارا تھا – جب یہ قانونی نہیں تھا (اور کافی مقبول تھا)۔ یہ سال ۲۰۰۷ کے ابتدائی دنوں کی بات ہے، جب میں بیل گاڑی کی دوڑ میں کچل کر ہلاک ہو جانے والے کچھ انسانوں میں شامل ہونے سے بال بال بچ گیا تھا۔

مترجم: محمد قمر تبریز

P. Sainath is Founder Editor, People's Archive of Rural India. He has been a rural reporter for decades and is the author of 'Everybody Loves a Good Drought'.

Other stories by P. Sainath
Translator : Mohd. Qamar Tabrez

Mohd. Qamar Tabrez is the Translations Editor, Hindi/Urdu, at the People’s Archive of Rural India. He is a Delhi-based journalist, the author of two books, and was associated with newspapers like ‘Roznama Mera Watan’, ‘Rashtriya Sahara’, ‘Chauthi Duniya’ and ‘Avadhnama’. He has a degree in History from Aligarh Muslim University and a PhD from Jawaharlal Nehru University, Delhi.

Other stories by Mohd. Qamar Tabrez