ویڈیو دیکھیں: منی پوری پُنگ بجانے والے اس فن کے فلسفہ کے بارے میں بتا رہے ہیں

سرونگبم کھومیئی نے پانچ سال کی عمر میں پُنگ (ڈھول) سیکھنا شروع کر دیا تھا۔ ۳۵ سال کی عمر میں، وہ ایک استاد بن گئے۔ اب وہ ۷۶ سال کے ہیں اور امفال، منی پور کے ہاؤریبی اوانگ لیئی کائی میں رہتے ہیں، جہاں سے وہ ہمیں پُنگ کی روایت اور سنکیرتن کی ثقافت کے بارے میں بتاتے ہیں۔

دو منہ والے پُنگ کو میئی تیئی برادری کے ذریعہ آلات موسیقی کا بادشاہ مانا جاتا ہے۔ اس کے بغیر کچھ بھی مکمل نہیں ہے، نہ ہی گیت اور نہ ہی مارشل روایات سے ماخوذ غیر معمولی رقص، پُنگ چولوم۔

مترجم: محمد قمر تبریز

Mohd. Qamar Tabrez is PARI’s Urdu/Hindi translator since 2015. He is a Delhi-based journalist, the author of two books, and was associated with newspapers like ‘Roznama Mera Watan’, ‘Rashtriya Sahara’, ‘Chauthi Duniya’ and ‘Avadhnama’. He has a degree in History from Aligarh Muslim University and a PhD from Jawaharlal Nehru University, Delhi. You can contact the translator here:

Anubha Bhonsle & Sunzu Bachaspatimayum

Anubha Bhonsle is a 2015 PARI fellow, an independent journalist, an ICFJ Knight Fellow, and the author of “Mother, Where’s My Country?', a book about the troubled history of Manipur and the impact of the Armed Forces Special Powers Act. Sunzu Bachaspatimayum is a freelance journalist and a national award-winning filmmaker based in Imphal.

Other stories by Anubha Bhonsle & Sunzu Bachaspatimayum