html بانس واڑہ کی عارضی ’چیئر ویمن‘

’ہون جانو، ہون خبر؟‘ (’میں کیسے جانوں کہ یہ کیا ہے؟‘ مقامی واگھری بولی میں)

راجستھان کے بانس واڑہ ضلع کے بوری، کھرویڈا اور سیمالیا گاؤوں میں، عورتوں سے بات کرتے وقت، میں نے نوٹس کیا کہ ان میں سے زیادہ تر زمین پر، یا تو چٹائی پر یا پھر چٹائی کے بغیر بیٹھی ہوئی ہیں۔ مرد اور بزرگ ہمیشہ اوپر بیٹھتے ہیں، کرسیوں پر یا چارپائیوں پر، حالانکہ مردوں کی موجودگی میں بزرگ عورتیں، اگر بیمار بھی ہوں، تو زمین پر بیٹھتی ہیں۔ یہی سچائی بچوں کو لے کر بھی ہے، لڑکے اوپر بیٹھتے ہیں، لڑکیاں نہیں۔

کھرویڈا اور سیمالیا کے زیادہ تر لوگ کسان ہیں۔ روایتی طور پر وہ بُنکر تھے، لیکن گزشتہ چند نسلوں سے انھوں نے بُنائی کرنا چھوڑ دیا۔ بوری میں، بعض عورتیں ڈیئری فارمرس بھی ہیں، یعنی مویشیوں کو پال کر ان کے دودھ وغیرہ بیچتی ہیں۔

پوچھنے پر عورتوں نے بتایا کہ عورتوں کا زمین پر بیٹھنا یہاں کی روایت ہے۔ شادی ہوجانے کے بعد، فیملی کی بیٹی جب اپنے والدین کے گھر آئے گی تو وہ اوپر بیٹھ سکتی ہے، لیکن بہوئیں ہمیشہ زمین پر ہی بیٹھیں گی۔

عورتیں صرف اسی وقت زمین پر نہیں بیٹھتیں جب مرد اور گاؤں کے بزرگ ایک جگہ پر ہوں، بلکہ انھیں اس وقت بھی زمین پر ہی بیٹھنا پڑتا ہے جب میرے جیسے مہمان آس پاس ہوں، یعنی ان سب کے سامنے جن کے بارے میں وہ سوچتی ہیں کہ وہ ان سے زیادہ طاقتور یا خوشحال ہیں۔

ہم نے دھیرے دھیرے اس موضوع پر سیلف ہیلپ گروپ میں بات کرنا شروع کیا۔ وہ اس بات کو لے کر محتاط تھیں کہ وہ اپنے بزرگوں یا ساس سسر کی تذلیل تو نہیں کر رہی ہیں۔ بعض کا خیال تھا کہ یہ چلن ختم ہونا چاہیے، بعض چاہتی تھیں کہ یہ باقی رہے۔

آہستہ آہستہ وہ سبھی اس بات کے لیے تیار ہو گئیں کہ وہ کرسی، یا چارپائی یا پھر کسی اونچی جگہ پر بیٹھ کر تصویر کھنچوائیں گی۔ وہ اکثر اس بات کے لیے ضد کرتیں کہ ان کی تصویر گھر کے اندر، یا ان کے گھر کے پیچھے، یا پھر اپنی گود میں بیٹوں کو بیٹھا کر کھینچی جائے۔

چند نے تو بے دلی سے یہ کام کر لیا، لیکن زیادہ تر کو تھوڑی دیر کے لیے علامتی قد آوری کے لیے خود کو تیار کرنے میں کافی وقت لگ گیا۔

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیںبھوری بُنکر، کھرویڈا گاؤں؛ دائیںرتن پاٹی دار، بوری گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیںکچری یادو، سیمالیا گاؤں؛ دائیںوِملا پاٹی دار، بوری گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیںببلی دیوی، کھرویڈا گاؤں؛ دائیںسنگیتا بُنکر، کھرویڈا گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیںلکشمی بُنکر، کھرویڈا گاؤں؛ دائیںلکشمی بُنکر، سیمالیا گاؤں

PHOTO • Nilanjana Nandy

بائیںانیتا یادو، سیمالیا گاؤں؛ دائیںمانی بُنکر، کھرویڈا گاؤں

Mohd. Qamar Tabrez is PARI’s Urdu/Hindi translator since 2015. He is a Delhi-based journalist, the author of two books, and was associated with newspapers like ‘Roznama Mera Watan’, ‘Rashtriya Sahara’, ‘Chauthi Duniya’ and ‘Avadhnama’. He has a degree in History from Aligarh Muslim University and a PhD from Jawaharlal Nehru University, Delhi. You can contact the translator here:

Nilanjana Nandy

Nilanjana Nandy is a Delhi-based visual artist and educator. She has participated in several art exhibitions, and has recieved a scholarship from the Pont-Aven School of Art, France, among others. She has a master’s degree in Painting from the Faculty of Fine Arts, Maharaja Sayajirao University of Baroda. The photographs featured here were taken during an artist in residency programme in Rajasthan called ‘Equilibrium’.

Other stories by Nilanjana Nandy