بڑے بڑے شہروں سے اپنے گھروں کی طرف کوچ کرنے والے مہاجر مزدوروں کی تصویریں پورے میڈیا میں چھائی ہوئی ہیں۔ لیکن، چھوٹے شہروں اور دور دراز کے دیہاتوں کے نامہ نگار بھی گھر لوٹ رہے مزدوروں کی پریشانیوں کو اجاگر کرنے کی پوری کوشش کر رہے ہیں۔ بلاس پور کے ایک سینئر فوٹو جرنلسٹ ستیہ پرکاش پانڈے ان لوگوں میں سے ایک ہیں، جو ان مہاجرین کو کور کر رہے ہیں، جو پیدل ہی کافی لمبی دوری طے کرتے ہوئے اپنے گھر کی طرف آ رہے ہیں۔ اس رپورٹ میں استعمال کی گئی ان کی اس فوٹو میں چھتیس گڑھ کے رائے پور سے جھارکھنڈ کے گڑھوا ضلع کے مختلف گاؤوں لوٹ رہے تقریباً ۵۰ مزدوروں کا ایک گروپ ہے۔

رائے پور اور گڑھوا کے درمیان کی دوری ۵۳۸ کلومیٹر ہے۔

’’وہ پیدل چل رہے تھے،‘‘ وہ بتاتے ہیں۔ ’’گزشتہ ۲-۳ دنوں میں وہ ۱۳۰ کلومیٹر (رائے پور اور بلاس پور کے درمیان کی دوری) پہلے ہی طے کر چکے تھے۔ اور انہیں لگ رہا تھا کہ اگلے ۲-۳ دنوں میں وہ اپنی منزل تک پہنچ جائیں گے۔‘‘ (ستیہ پرکاش کے ایک فیس بک پوسٹ نے ان کے بحران کی طرف لوگوں کی توجہ مبذول کرائی، پھر ردِ عمل ظاہر کرنے والے کارکنوں نے ضلع انتظامیہ سے رابطہ کرکے ان مزدوروں کے لیے امبیکاپور سے آگے کے ٹرانسپورٹ کا انتظام کرنے کے لیے کہا۔ وہ گھر جانے کے لیے پرعزم تھے، بھلے ہی انہیں پیدل ہی کیوں نہ سفر کرنا پڑے)۔

جیسا کہ گھر لوٹنے والے مزدوروں میں سے ایک، رفیق میاں نے ان سے کہا: ’’غریبی اس ملک میں ایک عذاب ہے، سر۔‘‘

کور فوٹو: ستیہ پرکاش پانڈے بلاس پور کے سینئر صحافی اور وائلڈ لائف فوٹوگرافر ہیں۔

PHOTO • Satyaprakash Pandey

’انہوں نے ۲-۳ دنوں میں ۱۳۰ کلومیٹر (رائے پور اور بلاس پور کے درمیان کی دوری) پہلے ہی طے کر لی تھی‘

(مترجم: ڈاکٹر محمد قمر تبریز)

محمد قمر تبریز 2015 سے ’پاری‘ کے اردو/ہندی ترجمہ نگار ہیں۔ وہ دہلی میں مقیم ایک صحافی، دو کتابوں کے مصنف ہیں، اور ’روزنامہ میرا وطن‘، ’راشٹریہ سہارا‘، ’چوتھی دنیا‘ اور ’اودھ نامہ‘ جیسے اخبارات سے منسلک رہے ہیں۔ ان کے پاس علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے تاریخ اور جواہر لعل نہرو یونیورسٹی، دہلی سے پی ایچ ڈی کی ڈگری ہے۔ You can contact the translator here:

Purusottam Thakur

پرشوتم ٹھاکر ۲۰۱۵ کے پاری فیلو ہیں۔ وہ ایک صحافی اور دستاویزی فلم ساز ہیں۔ فی الحال، وہ عظیم پریم جی فاؤنڈیشن کے ساتھ کام کر رہے ہیں اور سماجی تبدیلی پر اسٹوری لکھتے ہیں۔

Other stories by Purusottam Thakur