’ہون جانو، ہون خبر؟‘ (’میں کیسے جانوں کہ یہ کیا ہے؟‘ مقامی واگھری بولی میں)

راجستھان کے بانس واڑہ ضلع کے بوری، کھرویڈا اور سیمالیا گاؤوں میں، عورتوں سے بات کرتے وقت، میں نے نوٹس کیا کہ ان میں سے زیادہ تر زمین پر، یا تو چٹائی پر یا پھر چٹائی کے بغیر بیٹھی ہوئی ہیں۔ مرد اور بزرگ ہمیشہ اوپر بیٹھتے ہیں، کرسیوں پر یا چارپائیوں پر، حالانکہ مردوں کی موجودگی میں بزرگ عورتیں، اگر بیمار بھی ہوں، تو زمین پر بیٹھتی ہیں۔ یہی سچائی بچوں کو لے کر بھی ہے، لڑکے اوپر بیٹھتے ہیں، لڑکیاں نہیں۔

کھرویڈا اور سیمالیا کے زیادہ تر لوگ کسان ہیں۔ روایتی طور پر وہ بُنکر تھے، لیکن گزشتہ چند نسلوں سے انھوں نے بُنائی کرنا چھوڑ دیا۔ بوری میں، بعض عورتیں ڈیئری فارمرس بھی ہیں، یعنی مویشیوں کو پال کر ان کے دودھ وغیرہ بیچتی ہیں۔

پوچھنے پر عورتوں نے بتایا کہ عورتوں کا زمین پر بیٹھنا یہاں کی روایت ہے۔ شادی ہوجانے کے بعد، فیملی کی بیٹی جب اپنے والدین کے گھر آئے گی تو وہ اوپر بیٹھ سکتی ہے، لیکن بہوئیں ہمیشہ زمین پر ہی بیٹھیں گی۔

عورتیں صرف اسی وقت زمین پر نہیں بیٹھتیں جب مرد اور گاؤں کے بزرگ ایک جگہ پر ہوں، بلکہ انھیں اس وقت بھی زمین پر ہی بیٹھنا پڑتا ہے جب میرے جیسے مہمان آس پاس ہوں، یعنی ان سب کے سامنے جن کے بارے میں وہ سوچتی ہیں کہ وہ ان سے زیادہ طاقتور یا خوشحال ہیں۔

ہم نے دھیرے دھیرے اس موضوع پر سیلف ہیلپ گروپ میں بات کرنا شروع کیا۔ وہ اس بات کو لے کر محتاط تھیں کہ وہ اپنے بزرگوں یا ساس سسر کی تذلیل تو نہیں کر رہی ہیں۔ بعض کا خیال تھا کہ یہ چلن ختم ہونا چاہیے، بعض چاہتی تھیں کہ یہ باقی رہے۔

آہستہ آہستہ وہ سبھی اس بات کے لیے تیار ہو گئیں کہ وہ کرسی، یا چارپائی یا پھر کسی اونچی جگہ پر بیٹھ کر تصویر کھنچوائیں گی۔ وہ اکثر اس بات کے لیے ضد کرتیں کہ ان کی تصویر گھر کے اندر، یا ان کے گھر کے پیچھے، یا پھر اپنی گود میں بیٹوں کو بیٹھا کر کھینچی جائے۔

چند نے تو بے دلی سے یہ کام کر لیا، لیکن زیادہ تر کو تھوڑی دیر کے لیے علامتی قد آوری کے لیے خود کو تیار کرنے میں کافی وقت لگ گیا۔


02-NN-The-temporary-'chairwomen'-of-Banswara.png

بائیں: بھوری بُنکر، کھرویڈا گاؤں؛ دائیں: رتن پاٹی دار، بوری گاؤں


03-Vimla(left)-&-Lakshmi-NN-The-temporary-'chairwomen'-of-Banswara.png

بائیں: کچری یادو، سیمالیا گاؤں؛ دائیں: وِملا پاٹی دار، بوری گاؤں


04-Kachri-&-35-NN-The-temporary-'chairwomen'-of-Banswara.png

بائیں: ببلی دیوی، کھرویڈا گاؤں؛ دائیں: سنگیتا بُنکر، کھرویڈا گاؤں


05-NN-The-temporary-'chairwomen'-of-Banswara.png

بائیں: لکشمی بُنکر، کھرویڈا گاؤں؛ دائیں: لکشمی بُنکر، سیمالیا گاؤں


06-NN-The-temporary-'chairwomen'-of-Banswara.png

بائیں: انیتا یادو، سیمالیا گاؤں؛ دائیں: مانی بُنکر، کھرویڈا گاؤں

ڈاکٹر محمد قمر تبریز ایک انعام یافتہ، دہلی میں مقیم اردو صحافی ہیں، جو راشٹریہ سہارا، چوتھی دنیا اور اودھ نامہ جیسے اخبارات سے جڑے رہے ہیں۔ انہوں نے خبر رساں ایجنسی اے این آئی کے ساتھ بھی کام کیا ہے۔ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے تاریخ میں گریجویشن اور جواہر لعل نہرو یونیورسٹی سے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کرنے والے تبریز اب تک دو کتابیں اور سینکڑوں مضامین لکھنے کے علاوہ متعدد کتابوں کے انگریزی اور ہندی سے اردو میں ترجمے کر چکے ہیں۔ آپ ان سے یہاں رابطہ کر سکتے ہیں: @Tabrez_Alig You can contact the translator here:

Nilanjana Nandy

نیلانجنا نندی دہلی میں مقیم ایک وژول آرٹسٹ اور ایجوکیٹر ہیں۔ وہ متعدد آرٹ نمائشوں میں شرکت کر چکی ہیں، انہیں متعدد انعامات کے ساتھ ساتھ پورٹ۔ایون اسکول آف آرٹ، فرانس کی اسکالرشپ بھی مل چکی ہے۔ ان کے پاس مہاراجہ سیاجی راؤ یونیورسٹی، بڑودہ کے فیکلٹی آف فائن آرٹس کی ماسٹر ڈگری ہے۔ یہ تصویریں راجستھان میں ’ایکوی لیبریم‘ نام کے ایک ریزیڈنسی پروگرام میں ایک آرٹسٹ کے دوران لی گئیں۔

Other stories by Nilanjana Nandy